نبی محمد ﷺ کی شان میں‌گستاخی آزادی اظہار رائے بلکل نہیں، پیوٹن

روس کے صدر ولادی میر پیوٹن نے اقرار کیا ہے کہ حضرت محمد ﷺ کی شان میں گستاخی کرنا آزادی اظہار رائے نہیں بلکہ اظہار رائے کی کھلی خلاف ورزی ہے۔

روسی خبررساں ادارے کے مطابق ماسکو میں اپنی سالانہ پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے ولادی میر پیوٹن نے کہا کہ نبی کریم ﷺ کی توہین کرنا درحقیقت مذہبی آزادی کی خلاف ورزی اور مسلمانوں کے جذبات کو ٹھیس پہنچانے کے مترادف ہے۔

روسی صدر نے نے فنکارانہ آزادی کی حمایت کرتے ہوئے کہا کہ اس کی بھی کچھ حدو د و قیود ہیں جن کی آزادی کے نام پر خلاف ورزی نہیں ہونی چاہیے۔

vladimir putin russian president

گزشتہ سال فرانسیسی اخبار چارلی ہیبڈو کے دفاتر پر ہونے والے حملوں کا حوالہ دیتے ہوئے روسی صدر نے کہا کہ پیغمبر اسلام کی توہین جیسے اقدامات انتہا پسندانہ انتقامی کارروائیوں کو جنم دیتی ہیں۔

پیوٹن نے نازیوں کی تصاویر کو ویب سائٹس پر پوسٹ کرنے پر بھی تنقید کی . انہوں نے کہا کہ روس ایک کثیر النسلی اور کثیر الاعتقادی ریاست کے طور پر ابھر کر سامنے آیا ہے، اس لیے ہم روسی ایک دوسرے کی روایات کا احترام کرنے کے عادی ہیں۔

دریں اثناء وزیر اعظم عمران خان نے سماجی رابطوں کی ویب سائٹ ٹوئٹر پر پیغام میں روسی صدر کے بیان کا خیر مقدم کرتے ہوئے کہا کہ صدر پیوٹن کا بیان میرے اس پیغام کی تصدیق کرتا ہے کہ ہمارے نبی پاکﷺ کی توہین آزادی اظہار نہیں اور ہم مسلمانوں بالخصوس مسلم رہنماؤں کو اسلام فوبیا کا مقابلہ کرنے کے لیے اس پیغام کو غیر مسلم ممالک کے رہنماؤں تک پہنچانا چاہیے۔