چین کم قیمت کرائے کے 6 ملین گھر تعمیر کریگا

چین نے اعلان کیا ہے کہ 2025 تک ملک کے 40 بڑے شہروں میں 6.5 ملین نئے کم لاگت والے کرائے کے مکانات تعمیر کیے جائینگے جس کا مقصد بڑے شہروں کی بڑھتی ہوئی طلب کو پورا کرنا ہے کیونکہ ان شہروں کی آبادی بڑھ رہی ہے۔

ہاؤسنگ اور شہری-دیہی ترقی کی وزارت کے ایک اہلکار پین وی نے بیجنگ میں ایک نیوز بریفنگ میں کہا کہ اس منصوبے سے 13 ملین نوجوانوں کے لیے زندگی کی مشکلات کم ہو جائیں گی۔

چین نے صدر شی جن پنگ کے “مشترکہ خوشحالی” کے منصوبے کے تحت بڑے شہروں میں گھروں کی قیمتوں میں اضافے کے درمیان خاص طور پر نوجوانوں کو درپیش رہائشی مسائل کو حل کرنے کے لیے کوششیں تیز کر دی ہیں۔

اہلکار نے کہا کہ سستی کرائے کے مکانات کے لیے ترقی کا زور ان شہروں پر مرکوز کرنا ہے جہاں آبادی کی بڑی آمد اور مکانات کی قیمتیں زیادہ ہیں۔

شہروں کی طرف سے شائع کردہ منصوبوں کی بنیاد پر رائٹرز کے حسابات کے مطابق بیجنگ اور شنگھائی جیسے شہروں 2025 تک کل ایک عشاریہ 87 ملین یونٹ کم لاگت والے کرایے کے مکانات فراہم کریں گے۔

انہوں نے کہا کہ 2021 میں 40 شہروں میں 936,000 یونٹس پیش کیے گئے جن میں 20 لاکھ نوجوانوں کی رہائش تھی۔

چین کی جائیداد میں مندی 2022 میں جاری رہنے کی توقع ہے، ماہانہ نئے گھروں کی قیمتوں میں کمی اور لیکویڈیٹی بحران جس نے کچھ بڑے پراپرٹی ڈویلپرز کو اپنی لپیٹ میں لے لیا ہے۔

چینی ریگولیٹرز سخت لینڈنگ کو روکنے اور غیر قیاس آرائی پر مبنی گھر خریداروں کی مانگ کو پورا کرنے کے لیے پراپرٹی سیکٹر پر پابندیوں میں معمولی نرمی کر رہے ہیں۔